صفحہ اول سرگرمیاں English
تازہ سرگرمیاں
ترکی سے آئے مہمان پی ڈی ایف چھاپیے ای میل
شئیرنگ انسائٹ

turk guesttترکی کے سرکاری ادارے ”ہائی کونسل آف ریلیجئس افیئرز“ (مذہبی امور کی اعلیٰ کونسل) کے صدر ڈاکٹر اکرم کیلس، مارمارا یونیورسٹی کے ڈاکٹر عبدالحامد برسک اور استنبول انٹرنیشنل کے ایم ڈی خالد اوغرلو 23 نومبر 2015ء کو انسٹی ٹیوٹ آف پالیسی اسٹڈیز اسلام آباد میں تشریف لائے اور آئی پی ایس کے ڈائریکٹر جنرل خالد رحمٰن اور آؤٹ ریچ شعبہ کے سربراہ نوفل شاہ رخ سے باہمی دلچسپی کے امور پر بات چیت کی۔

مزید پڑھیے۔۔۔
 
جنوبی افریقہ کے ہائی کمشنر کی آمد پی ڈی ایف چھاپیے ای میل
شئیرنگ انسائٹ

sahightاسلام آباد میں متعین جنوبی افریقہ کے ہائی کمشنر عزت مآب مینڈولوجیلی اور ڈپٹی ہیڈ آف مشن مائیکل باسن 23 نومبر 2015ء کو انسٹی ٹیوٹ آف پالیسی اسٹڈیز اسلام آباد میں تشریف لائے اور ڈائریکٹر جنرل آئی پی ایس خالد رحمٰن سے پاکستان کی موجودہ سیاسی صورت حال اور علاقائی حرکیات میں پاکستان کے موجودہ اور آئندہ کردار کے بارے میں تبادلہ خیال کیا۔

مزید پڑھیے۔۔۔
 
سیمینار: توانائی کے شعبہ میں حکومتی کارکردگی ایک جائزہ پی ڈی ایف چھاپیے ای میل
سیمینار

energ crisis2ماہرین نے توانائی کے شعبے میں حکومتی کارکردگی کا جائزہ لیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر تمام منصوبوں پر صحیح طور پر عمل درآمد کیا گیا تو لوڈ شیڈنگ کا مسئلہ وقتی طور پر تو 2017ء  کے آخر تک ختم ہو جائے گا تاہم یہ توانائی کے بحران کا مستقل حل ثابت نہیں ہو گا کیونکہ اس کے پیچھے پائیدار منصوبہ بندی اور تمام ضروری عوامل کو پیش نظر رکھ کر، دوراندیشی کے ساتھ فیصلے کرنے کا فقدان نظر آتا ہے۔ یہ سب چیزیں اچھی حکمرانی، اداروں کی مضبوطی اور پائیداری پر منحصر ہوتی ہیں۔ حقیقت یہ ہے کہ اچھی حکمرانی توانائی کے بحران کا طویل المدتی حل ہے۔

مزید پڑھیے۔۔۔
 
گیارہویں کراچی انٹرنیشنل بک فیئر میں شرکت پی ڈی ایف چھاپیے ای میل
شئیرنگ انسائٹ

kibftکتابوں کی اشاعت و فروخت کے سلسلہ میں انسٹی ٹیوٹ آف پالیسی اسٹڈیز اسلام آباد کے فعال بازو — آئی پی ایس پریس — نے کراچی میں منعقد ہونے والے گیارہویں بین الاقوامی کتاب میلے میں شرکت کی اور اپنا اسٹال لگایا۔ یہ کتاب میلہ 12 تا 16 نومبر 2015ء کراچی شہر کے ایکسپو سنٹر میں منعقد ہوا۔ یہ پاکستان میں اشاعتی صنعت کا سب سے بڑا سالانہ پروگرام ہے، جس میں کتاب سے محبت کرنے والے اور معاشرے کے مختلف رنگوں کی نمائندگی کرنے والے پانچ لاکھ کے قریب افراد شریک ہوئے۔

مزید پڑھیے۔۔۔
 
«شروعپیچھے12345678910آگےآخر»